اتوار, اگست 25, 2013

PTI - Lessons to learn from bye election

It is not sustainable idea to have multiple rules for choosing candidates. One rule of merit must be set which should be exercised across the board. Popularity, devotion, enthusiasm, experience and time with party are some of the factors define merit for candidates but it must be clear that what has the higher priority than others. For example, we cannot give higher priority to popularity in one constituency while experience in another.

The prevailing norm of halqa based election is finding electables but this does not fit to PTI long term policy. While it can be acceptable due to tough starting position of the party, it must be strategically fought and the brand of PTI to be made more sell-able. A lot to learn from MQM in this regard.

There must be a channel of internal communication so that party workers donot need to turn to media to get internal news of the party. If we party members have such channel and start believing that anything said on that channel will never be contradicted (will only be truth in other words) then it will not only increase dedication among us but would also serve as mechanism to raise our voices. Specially, the voices of dissent within the party must be shared through that so that we know what were the arguments in favor or against of anything. Currently, we hear this from media but no trusted channel exist. Insaf.pk is so called such place but apparently there is no sincere work on internal communication on that channel and it is just used as feed for media.

اتوار, جون 30, 2013

PIA's over crowded staff!

Pakistani International Airlines which once served as worlds one of the top airline is suffering with the worst time of its history. The losses have reached to an unprecedented level as reported by newspapers. Only in 2011 the losses were about 70 million rupees daily as per http://www.nation.com.pk/pakistan-news-newspaper-daily-english-online/national/21-Jan-2012/pia-sustained-rs70m-loss-daily-in-2011

It is important to understand that PIA is run by the public money and already poverty stricken people cannot afford losses by the flag carrier instead of giving profit. One of the biggest reason for PIA's downfall is considered to be huge number of employees that it has. According to Pakistan Observer (http://pakobserver.net/detailnews.asp?id=128193) PIA carries more than 400 employees on average for each aircraft it has. This must be corrected before any improvement can be planned or made to make PIA again a profitable organization.

It is in the news already that Pakistan govt is thinking to liberalize aviation industry and if that happens PIA must be divided into 2 or 3 units competing with each in domestic market. This will allow PIA to keep its more than 18000 employees and will enable it to go for profit again in near future. Throwing the employees who have got some experience of your organization is never cost effective provided you have to pay them a handsome money as well. Leasing new planes will also be easy due to the prospects of new companies.

There must be a lot of things to look into before performing such division but sooner or later it has to be done. No airline can survive with this much fat in its organization in this fast moving and fiercely competing airline industry. 

اتوار, مئی 26, 2013

PTI's wrong image in Pakistani media!!

I just watched Kashif Abbasi's program 'Off the Record on ARY Television in which he was discussing along with other journalists use of abusive language in social media. The program was overall balanced and although alone Rauf Klasra did support the other side in the discussion.

The unfortunate thing for me was dragging of PTI's name in the discussion as the 'rooh e rawan' of all this mess in social media. I wonder if it is really new that Pakistani people has started abusing their opponents? Don't we remember how in 90s BB, NS and their respective party members used to talk against each other? There are many example to quote here but that's not the point. The point is that social media is no different, it is the same people or say even more people who now have voices and they will show what they are up to.

It has nothing to with PTI as PTI has seriously distanced itself from these rouge supporters. Most of the people abusing in social media donot have their real faces behind it and so they cannot be associated with any party. The argument that most of the abusers support PTI can be used in PTI favor as well that these are the paid or appointed people by other parties. Why would a real supporter go on and on using dirty language and distancing people from his or her supported party? It must be noted here that of course we are talking about general public and PTI social media team or any other PTI officials have never used such language in discussion or otherwise have faced the consequence in the form of disciplinary action against them.

Then the golden argument about leadership that since IK calls in Jalsas 'Ballai se phenti laga dein gai' so it must have a trickle down effect and so IK supporters use the same language. This is extreme as on the other hand SS from PMLN says 'ham Zardari ko sakron per ghasitain gai' but it does not have any effect on his party supporters but 'ballai ki phenti' has those effects. Surprisingly, a generic statement is more abusive in the eyes of our media than a statement against a named personality. This is very strange selection of rating by our media I must say.

And last but not the least, in the program when there was a discussion why MQM is never pointed out for their wrong doings. Two of the anchors said that they couldnot blame someone without any proof. While this is commendable behavior by these anchors, it is equally surprising that why bad behavior of some people in social media with unproven affiliation to PTI is easily associated with PTI?

ہفتہ, مئی 25, 2013

The youth leadership!!!

The question of youth leadership is coming from the day it has been known that PTI is going to make government in KPK. People not only from the opposition parties in KPK like JUI and PMLN but also people from within PTI are asking such questions that 'why not a younger CM in the province?' or 'where is the promise of youth leadership?' etc.

Pakistan Tehreek e Insaf had promised representation of youth in all forums and it has more than fulfilled it by introducing about 40 percent of its candidates under the age of 40. The winning candidates like Mr Murad Saeed from Sawat for national assembly and Mr Atif Khan who was seen as good candidate for CM seat in KPK by many PTI supporters are couple out of many examples. Many other candidates who could not win the election still grabbed huge amount of votes and will possibly make their place in subsequent parliaments hopefully if the continue their efforts.

But promise of youth representation does not necessarily mean youth leadership in parliaments as well. It is known to everybody that if PTI had won majority in national assembly then Imran Khan would have been nominated as Prime Minister of Pakistan. Imran Khan is not belong to youth and so can be said for Pervez Khattak and so this discussion does not make any sense at all. 

بدھ, مئی 22, 2013

پاکستان تحریک انصاف اور الیکشن ۲۰۱۳ ۔ صوبائی حکومت خیبر پختونخوا ۔ آخری حصہ

4 روزگار

روزگار کی فراہمی کسی بھی حکومت کے لیے ایک اہم چیلنج ہوتا ہے۔ خیبرپختونخوا میں امن کا فقدان اس معاملے کو اور بھی گھمبیر بناتا ہے اور سیکورٹی کے مسئلے کو حل کیے بغیر اس کو حل نہیں کیا جا سکتا۔

سب سے زیادہ کرپشن نوکری دینے کے معاملے میں ہوتی ہے اور جب کوئی پیسے دے کر روزگار حاصل کرتا ہے تو وہ اس روزگار کا حق بھی ادا نہیں کرسکتا اور الٹا مزید کرپشن کا باعث بنتا ہے۔ 

حکومت کی سب سے پہلی کوشش میرٹ پر اور کرپشن سے بے داغ سرکاری نوکریوں کی تقسیم ہے۔ جب لوگوں کو میرٹ پر اور بغیر کسی کو پیسے دیے نوکری ملے گی تو یہ بذات خود حکومت کی نیک نامی کا باعث بنے گی۔ دوسرا ایسے لوگ جانفشانی اور خلوص سے حکومتی فرائض ادا کریں گے تو حکومت کی کارکردگی میں اضافہ ہوگا۔ 

سمندر پار پاکستانیوں کو انویسٹمنٹ کے مواقع دینے سے بھی نوکریاں پیدا ہونگی۔ پبلک پرائیویٹ پارٹنرشپ سے بڑے بڑے ادارے قائم کیے جانے چاہئیں۔ ان اداروں میں گورنمنٹ کے بڑے حصے کے باوجود انہیں کلی طور پر پرائیویٹ کنٹرول میں دیا جانا چاہئے۔ اسکی مثالیں پاکستان میں پہلے سے موجود ہیں۔ 

آئی ٹی سیکٹر میں چھوٹے کاروبار کرنے والوں کے لیے آسانیاں پیدا کر کے بہت ساری نوکریاں پیدا کی جا سکتی ہیں۔ آئی ٹی سیکٹر میں یہ آسانیاں دینا حکومت کے لیے کوئی بڑا کام بھی نہیں ہوگا۔ پاکستان بھر کی اچھی یونیورسٹیوں کے گریجویٹس کو اور پہلے سے مختلف سافٹویر کمپنیوں میں نوکریاں کرنے والوں کو اپنا کاروبار چلانے کے لیے جگہ کی فراہمی، براڈبینڈ کنیکشن، ہوسٹنگ سروسز اور کمپیوٹنگ مشینری ایک مقررہ مدت کے لیے فراہم کی جاسکتی ہیں۔ اس کے ساتھ ان کو مینٹرنگ کی سہولت اور مارکیٹنگ کے مواقع بھی فراہم کیے جانے چاہئیں۔ ان کمپنیوں میں سے دس فیصد کی کامیابی بھی نوکریوں کے معاملے میں متوقع نتائج حاصل کرسکتی ہے اور سال بھر میں کسی ایک کمپنی کی بھی انٹرنیشنل مارکیٹ میں کامیابی ایک مثبت مسابقت کو جنم دے سکتی ہے۔






پاکستان تحریک انصاف اور الیکشن ۲۰۱۳ ۔ صوبائی حکومت خیبر پختونخوا ۔ تیسرا حصہ

3 صحت

صحت نا صرف خیبرپختونخوا کا بلکہ پاکستان کا ایک اہم مسئلہ ہے۔ صحت کی وزارت کے لیے ایک بہت ہی مستعد اور سمجھدار وزیر کی ضرورت ہے۔ ایک ایسا تعلیم یافتہ شخص جو نا صرف صحت کے مسائل سمجھتا ہو بلکہ پبلک ایڈمنسٹریشن کا تجربہ بھی رکھتا ہو کو اس پوسٹ پر تعینات کرنا چاہئے۔ 

وبائی امراض کو پھیلنے سے پہلے ہی کنٹرول کرنے کے لیے حفاظتی تدابیر اختیار کرنا حکومت وقت کی زمہ داری ہوتی ہے۔ موسموں کے بدلنے اور پہلے سے معلوم خطروں کے لیے وقت پر احکامات صادر کرکے حکومت بہت سے مسائل کو ابھرنے سے پہلے ہی انکا قلع قمع کرسکتی ہے۔ موسم گرما کے ساتھ ہی سیلاب کا خطرہ سر پر منڈلانے لگتا ہے جو اور تباہی کے ساتھ مختلف وبائی امراض کا باعث بھی بنتا ہے۔ حکومت کے قیام کے ساتھ ہی اس پر توجہ دینے کی ضرورت ہے۔ 

ماں اور بچے کی صحت کا خیال رکھنا ایک بہتر اور صحتمند معاشرے کے قیام کی پہلی کڑی ہے۔ ماں اگر صحتمند ہوگی تو بچوں کی پرورش اچھے طریقے سے کرسکے گی اور پھر وہ بچے بڑے ہو کر ایک صحتمند معاشرہ کا حصہ بن سکیں گے۔ لیڈی ہیلتھ ورکرز کے پروگرام کو وسعت دینا اور ماں اور بچے کی صحت کے بارے میں مطلوبہ تعلیمی مواد پیدا کرنا اور اسے سرکاری اہلکاروں، اخبارات اور ٹی وی کے زریعے عوام تک پہنچانا صوبائی حکومت کی اولین ترجیح ہونی چاہئے۔ 

پاکستان میں پائی جانے والی زیادہ تر امراض کا باعث صاف پانی کی کمیابی ہے۔ صاف پانی کے فلٹر کو عوام تک سستے داموں پہنچانے کا بندوبست کرنا چاہئے کیونکہ صاف پانی کا استعمال صحت کی مد میں دوسرے اخراجات کو کافی حد تک کم کرسکتا ہے۔ اس کے علاوہ صاف پانی بارے آگہی پھیلانے کے لیے بھی حتی المقدور کوشش کرنی ضروری ہے۔

صحت کے لیے ٹیکنالوجی کا استعمال بھی بہت ضروری ہے۔ ایک مرکزی پیشنٹ ریکارڈ سسٹم وقت کی اہم ضرورت ہے۔ ایسے کسی سسٹم کی موجودگی سے ہی بہت سارے پیچیدہ امراض اور مسائل کا حل ڈھونڈا جا سکتا ہے اور نتیجتا صحت کی مد میں بہت سے بے جا اخراجات سے بچا جا سکتا ہے۔

جاری ہے۔


سوموار, مئی 20, 2013

پاکستان تحریک انصاف اور الیکشن ۲۰۱۳ ۔ صوبائی حکومت خیبر پختونخوا ۔ دوسرا حصہ

2 تعلیم

تعلیم خیبر پختونخوا کی حکومت کے لیے دوسرا سب سے بڑا چیلنج ہوگا اسکی وجہ ایک تو صوبہ کی مخصوص صورتحال ہے دوسرا پی ٹی آئی کی انقلابی سوچ ہے جس نے پاکستان میں تعلیم کے بنیادی اصول کو تبدیل کرنے کا تہیا کیا ہے۔ 
صوبائی حکومت کے لیے سب سے اہم کام تعلیم کی مد میں خزانے کا منہ کھلوانا ہے۔ اس کے لیے ایک کام تو بجٹ کے دوران تعلیم کے لیے زیادہ پیسوں کا اجراء ہے دوسرا شاید کوئی نیا ٹیکس لگا کر وسائل پورا کرنا پڑے۔  
خیبر پختونخوا میں عورتوں کی تعلیم کو لے کر کچھ مسائل صوبائی حکومت کو درپیش ہونگے۔ لیکن اس کا ایک حل تو یہ ہے کے زیادہ سے زیادہ لڑکیوں کے تعلیمی مدارس کھولے جائیں۔ گرلز کالجز اور ویمن یونیورسٹیوں کی زیادہ تعداد ہی مستقبل میں گرلز ہائی اور پرائمری اسکول کی کمی کو پورا سکتی ہے۔ عورتوں کی معیاری تعلیم پر توجہ دینے کی بھی بہت زیادہ ضرورت ہے کیونکہ غیر معیاری تعلیم اصل میں تعلیم کی کمی سے زیادہ نقصان دہ ثابت ہوتی ہے۔ معاشرے میں اس خیال کا بن جانا کے عورتوں کی تعلیم سے کچھ حاصل نہیں ہوتا بہت حد تک غیر معیاری تعلیم کی وجہ سے ہوتا ہے۔ 
پی ٹی آئی نے سائنس اور باقی مضامین کے لیے مادری زبان کی شرط عائد کی ہے۔ اگرچہ کسی بھی معاشرے کی کامیابی کے لیے افراد کی تعلیم انکی اپنی زبان میں ہونا ضروری ہے لیکن میرے خیال میں پی ٹی آئی کو اس چیز کو مرحلہ وار لاگو کرنا چاہئے۔
اس کی سب سے اہم وجہ تو یہ ہے کہ دنیا میں وہ سارے ممالک جو تعلیم اپنے مقامی زبان میں دیتے ہیں جو کہ انیسویں صدی میں غلام رہنے والے ممالک کے علاوہ سبھی ہی ہیں وہ بھی انگریزی کو ایک رابطے کی زبان کے طور پر ضرور پڑھاتے ہیں۔ ان ممالک میں انگریزی پڑھانے کا معیار اتنا اچھا ہوتا ہے کے یہاں بچے چھوٹی جماعتوں سے ہی انگریزی فرفر بولنا شروع کر دیتے ہیں۔ انگریزی پر یہ عبور انکو دنیا میں ابھرتی ہوئی مسابقت میں آگے رکھتا ہے تو اپنی مقامی زبان میں سائنسی اور دوسرے مضامین پڑھنے کی وجہ سے وہ ان اسباق کو بھی اچھی طرح سمجھتے ہیں اور اپنے ملک و قوم کے لیے باعث افتخار بنتے ہیں۔ جبکہ یہی چیز ہماری موجودہ تعلیمی سیٹ اپ میں نہیں پائی جاتی۔ ہمارا معیار تعلیم خاص طور پر ایلیمنٹری لیول پر بہت ہی برا ہے اور ہمارے بچے کافی دیر تک انگریزی پڑھنے کے باوجود بولنے اور اچھی طرح سمجھنے سے قاصر ہوتے ہیں۔ خیبر پختونخوا کی صوبائی حکومت کو تعلیمی انقلاب انگریزی تعلیم پر بہت زیادہ توجہ دینے سے شروع کرنا ہوگا۔ کچھ سالوں کے بعد ہی وہ وقت آئے گا جب حکومت مادری زبان کا قانون لا سکتی ہے تاکہ ابھی جو پرائیویٹ ادارے تعلیم دے کر حکومت کا ہاتھ بٹا رہے ہیں وہ سلسلہ بھی درہم برہم نا ہوجائے۔ 
دوسری وجہ اس مرحلہ وار تبدیلی کی یہ ہے کہ یہ کام صرف ایک صوبہ میں نہیں کیا جاسکتا۔ خیبر پختونخوا کے لوگوں نے وفاقی اداروں میں بھی نوکریاں کرنی ہوتی ہے اور انگریزی میں عبور کو گارنٹی کیے بغیر موجودہ سیٹ اپ کو تبدیل کرنا صوبہ کے عوام کے ساتھ زیادتی ہوگی۔ 
سکینڈے نیویا کی مثال اس معاملے میں بہت بہتر ہے جہاں اسکول جانے والا ہر طالبعلم انگریزی سے آشنا ہے۔ جبکہ دوسری طرف حال یہ ہے کہ یہاں طالبعلم  ماسٹر لیول کے تحقیقی مقالے بھی اپنی مقامی زبان میں لکھتے ہیں۔ 

تعلیم کو ہمارے ملک میں صرف اور صرف نصابی یا غیرنصابی کتابوں کے مطالعہ تک ہی محدود کردیا گیا ہے جو کہ تعلیم کا ایک مقصد یعنی علم کا حصول تو پورا کرتا ہے لیکن طالبعلم کو علم کی اصل روح یعنی علم کی پڑتال کرنے کی جستجو سے محروم رکھتا ہے۔ پی ٹی آئی کی حکومت اگر تعلیم کے شعبے میں انقلاب کی خواہشمند ہے تو اس کے لیے طالبعلموں کے تبادلہ کے پروگرام ضرور بنانے ہونگے۔ تبادلوں کے یہ پروگرام صوبائی یا ملکوں کی سطح پر تو شاید ابھی ممکن نا ہو لیکن بین الاضلاع تبادلے کے پروگرام ضرور بنائے جاسکتے ہیں۔ جماعت نہم سے لے کر بارہویں جماعت تک کے طلباء کے لیے ایسے موقعے فراہم کیے جاسکتے ہیں جس سے فائدہ اٹھا کر وہ صوبے کے دوسرے اضلاع میں اپنی چھ ماہ سے ایک سال کی تعلیم پوری کرسکتے ہیں۔ تحقیق سے یہ بات ثابت ہو چکی ہے کہ ایسے طلباء نا صرف تعلیم کے حصول میں زیادہ آگے بڑھتے ہیں بلکہ انکی شخصیت میں بھی اسکا مثبت اثر ہوتا ہے جوکہ انہیں نا صرف اچھا شہری بناتا ہے بلکہ یہ دوسروں کے مسائل کو بھی بہتر انداز میں سمجھتے ہیں۔

تعلیم کا بہتری کا زکر آتا ہے تو ساتھ ہی ملک میں پھیلے ہوئے مدارس کا زکر بھی ساتھ آتا ہے۔ یہ مدارس ملک کے طول و عرض میں موجود ہیں اور کسی بھی دوسرے تعلیمی مراکز کی طرح انکے بھی اچھے اور برے پہلو ہیں۔ ان مدارس میں بھی اسی طرح اصلاحات کی ضرورت ہے جس طرح باقی تعلیمی مراکز میں لیکن ان کا معاملہ باقیوں کی نسبت کافی حساس ہے۔ مدارس میں کسی بھی اصلاحات کا ایک ہی طریقہ ہے اور وہ یہ کہ انکے مقابل دوسرے تعلیمی مراکز کے تعلیمی معیار کو اتنا اونچا کر دیا جائے کہ ان مدارس کے پاس کوئی اور آپشن ہی موجود نا رہے سوائے اس کے وہ اپنے نظام اور نصاب پر نظر ثانی کریں۔ عوام اپنے بچوں کا وقت اور سرمایہ ایسے کسی نظام پر ضائع نہیں کریں گے جو ان کے بچوں کو مناسب تربیت نہیں دے سکتا۔ مدارس کے معاملے میں اس احتیاط کی بہت زیادہ ضرورت اس لیے بھی ہے کہ انکی ایک بڑی تعداد JUI کے پلیٹ فارم سے چلائی جاتی ہے اور پی ٹی آئی کے خلاف منفی پروپیگنڈا کے ایک ہتھیار کے طور پر استعمال کی جاسکتی ہے جس سے ابھی بچنے کی ضرورت ہے۔

جاری ہے۔

اتوار, مئی 19, 2013

پاکستان تحریک انصاف اور الیکشن ۲۰۱۳ ۔ صوبائی حکومت خیبر پختونخوا

الیکشن 2013 میں اب تک کے نتائج سے جو حکومتوں کی شکل ابھری ہے وہ میرے نزدیک کافی خوش آئند ہے۔ PMLN کی مرکزی اور پنجاب میں صوبائی حکومت کی ضرورت اس لیے تھی کے ان تجربہ کار لوگوں کی قابلیت کو ایک دفعہ کھل کر عوام کے سامنے آنے کا موقعہ ملے گا اور مرکزی اور صوبائی دونوں حکومت کے ساتھ یہ حجت تمام ہوجائے گی۔  اگلے الیکشن اگر کارکردگی کی جگہ ترجیحات پر لڑے جائیں تو یہ ہم سب کے لیے بہتر ہوگا۔
اسی طرح خیبر پختونخوا میں حکومت قائم کرنے سے پی ٹی آئی کو بہت فائدہ ہوگا۔ اس کا ایک رخ تو اپنی قابلیت، ترجیحات اور خلوص نیت کے اظہار کے لیے ممد ثابت ہوگا تاکہ عوام کا دل جیت کر اگلی دفعہ مرکزی حکومت بنانے کے لیے مینڈیٹ حاصل کیا جائے۔ جبکہ دوسری طرف  خیبر پختونخوا کی حکومت پی ٹی آئی کو اپنے انقلابی خیالات کے آزمانے کے لیے ایک عظیم موقعہ ثابت ہوگی۔ چونکہ صوبائی حکومت کچھ حد تک اپنے اختیارات میں محدود ہوتی ہے اس لیے انتخابات کے وقت کیے گئے وہ وعدے جن کو صرف مرحلہ وار ہی نافذ کیا جاسکتا ہے کو ٹالا جا سکتا ہے تاکہ ان کو ان کے صحیح وقت پر پورا کیا جا سکے۔ 
صوبائی حکومت کی زمہ داریاں اور پی ٹی آئی کے عوام سے کیے ہوئے وعدوں کو جمع کریں تو لسٹ کچھ اس طرح کی بنتی ہے۔ 1 امن و امان 2 تعلیم 3 صحت 4 روزگار۔

1 امن و امان
یہ پاکستان کا اور خاص طور پر اس صوبے کا سب سے بڑا مسئلہ ہے۔ اس کی اہمیت اس لیے بھی زیادہ ہوجاتی ہے کہ امن و امان کے بغیر آپ باقی سارے مسائل میں سکت کے باوجود اچھی کارکردگی کا مظاہرہ نہیں کر سکتے۔ پی ٹی آئی نے امن و امان سے متعلق لائحہ عمل پہلے ہی دیا ہوا ہے اور اب صرف اس پر عمل کروانے کی ضرورت ہے۔ خیبر پختونخوا میں داخلی سلامتی افغانستان میں جاری جنگ سے ماورا ہوکر نہیں سوچی جاسکتی اور اسی طرح پاکستانی طالبان کا معاملہ مزاکرات سے حل کرنے کے لیے آگے بڑھنا ہوگا۔ 
نیٹو سپلائی مرکزی حکومت کے معاہدوں کے زیر اثر چلتی ہے اور اس پر کسی بھی طرح کا ایکشن مرکزی حکومت کے لیے ہی چھوڑ دینا چاہئے۔ اگر یہ سپلائی جاری رہتی ہے تو اس کی حفاظت کا بندوبست بھی کرنا ہوگا کیونکہ حکومت کی رٹ کو برقرار رکھنا امن و امان قائم رکھنے کی پہلی شرط ہے۔ یہ سپلائی امریکہ کے افغانستان سے باہر نکلنے کے لیے بھی ضروری ہے۔ 
خیبر پختونخوا میں ڈرون حملے خال خال ہی ہوئے ہیں لیکن امریکہ کو یہ باور کرانا کے اب  خیبر پختونخوا کی سرزمین  پر ڈرون یا بن لادن جیسا حملہ برداشت نہیں کیا جائے گا بہت ہی ضروری ہے۔ قبائلی علاقوں میں آنے والے ڈرون کا معاملہ مرکزی حکومت پر چھوڑ دینا چاہئے لیکن ساتھ میں ان پر بہت زیادہ پریشر بھی ڈالنا چاہئے۔ نواز شریف کی حکومت اس پریشر کو استعمال کر کے امریکہ سے ڈرون حملوں پر سخت موقف لے سکتی ہے جسکا فائدہ بہرحال پاکستان عوام کو ہی ہوگا۔  اس بات کا اہتمام کرنا ہوگا کے ڈرون کے انتظار اور پھر اپنا جواب دینے کی بجائے امریکہ سے پہلے ہی جواب طلبی کی کوشش کی جائے۔ امریکہ نے ایک پالیسی بیان جاری کیا ہے جس میں اس نے ڈرون کو جاری رکھنے کا عندیہ دیا ہے۔ میرے خیال میں خیبر پختونخوا کے لیے اس پالیسی کو بدلوانے کی کوشش کرنا کوئی بہت مشکل کام نہیں ہے۔ اس لیے کے امریکن ایمبیسی کے بہت سے لوگ اپنے معاملات کے لیے صوبہ خیبر پختونخوا آتے ہیں اگر صوبائی حکومت انکے داخلہ پر تب تک پابندی عائد کردے جب تک امریکہ اپنی تبدیل شدہ پالیسی کا اعلان نہیں کرتا تو اس معاملے کو حل کیا جا سکتا ہے۔ پاکستان فوج کے تعلقات امریکہ سے کیسے ہیں اس عمل سے اس کا بھی پتا چل جائے گا۔ مجھے یقین ہے کہ فوج اگر چاہے بھی تو اس کام میں رکاوٹ نہیں ڈال سکتی۔
شدت پسندوں سے مزاکرات کے لیے سب سے پہلے حکومت کو ان اصول کو شائع کرنا ہوگا جسکی بناء پر طالبان یا کسی بھی دوسرے شدت پسندوں سے مزاکرات کیے جاسکتے ہیں۔ ان اصول میں میرے خیال میں سب سے پہلے اس نکتہ کو رکھنا ہوگا کہ شدت پسندوں کو ہتھیار ڈالنا ہوگا اور کسی بھی طرح کے دھماکوں اور حملوں کو جاری رکھنا ان مزاکرات کو سبوتاژ کرنے کے مترادف تصور کیا جائے گا۔ یہ بات زہن میں رہے کے یہ حقیقت ہے کہ شدت پسند ہتھیار ڈالنے پر کبھی بھی تیار نہ ہونگے لیکن اس کے بغیر ان سے مزاکرات کرنا یا ان کو معاشرے کے مجموعی دھارے میں شامل کرنا بھی ممکن نا ہوگا اور اگر کیا بھی گیا تو تباہ کن نتائج لے کر آئے گا۔ میرے خیال میں مزاکرات کا رستہ صرف اتمام حجت کے لیے استعمال ہو اور جو لوگ اس رستے سے واپسی آنا چاہیں انہیں خوش آمدید کہا جائے۔ 
اس کے بعد چونکہ صوبائی حکومت امریکی جنگ سے باہر آنے کا اعلان کرچکی ہے تو دہشت گردوں سے کسی بھی قسم کی رو رعایت نا برتی جائے اور ساتھ ہی میں حکومتی عمال کی مناسب اور موثر حفاظت کا بندوبست کیا جائے۔ حکومتی نقصان حکومت کی کارکردگی میں بڑی رکاوٹ بنتا ہے اس لیے اس کو کم سے کم کرنے کے لیے سائنسی بنیادوں پر کام کرنا ہوگا۔ 

جاری ہے ۔

پاکستان تحریک انصاف اور الیکشن ۲۰۱۳ ۔ مرکزی حکومت کو اعتماد کا ووٹ

مرکزی حکومت میں مسلم لیگ نواز کو سادہ اکثریت حاصل ہوگئی ہے اور وہ بنیادی طور پر دوسروں کے محتاج نہیں رہے لیکن پھر بھی وہ چاہیں گے کو اگر ان کا وزیراعظم متفقہ طور پر منتخب ہوجائےتاکہ دنیا بھر میں وہ اپنی حکومت کو بہتر طور پر پیش کرسکیں۔

تحریک انصاف نون کے نامزد کردہ وزیراعظم کو قبول کرکے اس موقعہ کو اچھی طرح استعمال کرسکتی ہے۔ خیبر پختونخوا میں تحریک کی حکومت JI اور QWP کے اتحاد کے ساتھ بننے جا رہی ہے اور یہ ضروری نہیں کے یہ ایک مستحکم حکومت ہو۔ مرکزی حکومت میں نون کے وزیراعظم کو سپورٹ کرنے کا ایک فائدہ یہ ہوگا کے کے پی کے میں JUI  کو بغیر نون کی سپورٹ کے ریشہ دوانیوں سے روکا جاسکے گا۔ اس طرح صوبائی حکومت اپنے منصوبوں پر زیادہ توجہ دے سکے گی اور انہیں زیادہ بہتر طور پر پایہ تکمیل تک پہنچا سکےگی۔ 

اس کا دوسرا بڑا فائدہ یہ ہوگا کے مرکز میں تحریک انصاف کی تنقید کو اہمیت ملے گی اور میڈیا اور صحافی حضرات اس تنقید کو اس لیے نظر انداز نہیں کر سکیں گے کہ اپوزیشن تو تنقید برائے تنقید کرتی ہے۔ 

نون لیگ کے وزیراعظم کو اعتماد کا ووٹ دیتے ہوئے تحریک انصاف کچھ نکات بھی شامل کرسکتی ہے۔ چونکہ یہ سپورٹ بن مانگے ہے اس لیے اس کو شرائط نہیں بنا سکتے مگر ان نکات کا اچھا اثرضرور ڈالا جاسکتا ہے۔

سب سے اہم نکتہ پنجاب میں بلدیاتی انتخابات کا انعقاد ہے۔ اگر نون لیگ اس نکتے پر دیر تک توجہ نہیں دیتی تو پھر بھی اس کا اثر میڈیا کے زریعے عوام پر 
ضرور پڑے گا۔

دوسرا  نکتہ کسی بھی بل یا ترمیم کی صورت میں پارلیمان میں ایک مکمل بحث کی شرط ہے۔ ماضی میں نون لیگ نے چند منٹوں میں قانون پاس کرنے کا ریکارڈ بنایا ہوا ہے۔ اس چیز سے جان چھڑانی ضروری ہے کیونکہ کسی بھی قانون کے تمام اچھے اور برے پہلوئوں کا جائزہ لیے بغیر اسے ملک پر نافذ کرنا تعمیر سے زیادہ تخریب کا باعث بنتا رہا ہے۔

تیسرا نکتہ ایک ایسے احتسابی ادارے کا قیام ہے جو کسی بھی دباو سا مبرا ہو۔ ایک اور نئے ادارے کے قیام کی بجائے نیب کو بھی ترامیم سے ایسا ادارہ بنایا جا سکتا ہے۔

چوتھا نکتہ ملک میں تعلیمی ایمرجنسی کا نفاذ ہے۔ اگلے 3 سالوں میں ملک کے تمام بچوں کواسکول پہنچانا اس تعلیمی ایمرجنسی کی بہت بڑی کامیابی ہوگی اور اس کے بغیر ملک کو ترقی کی طرف گامزن کرنا چاہے حکومت نون کی ہو تحریک انصاف کی ممکن نا ہوگا۔ اگر 5 سال بعد تحریک انصاف کی حکومت آتی ہے تو تعلیم کے بنیادی مسائل کا پہلے حل ہوجانا اسکے لیے کافی سود مند ہوگا۔

ان نکات پر زور دینے سے تحریک انصاف اپنی حکومت کے آنے سے پہلے ہی اپنے منشور پر جزوی طور پر عمل کرواسکتی ہے۔ اس کا سب سے بڑا فائدہ یہ ہوگا کہ اگر تحریک انصاف مستقبل میں مرکزی حکومت بناتی ہے تو ملک کے ترقی کی راہ پر ڈالنا ناممکنات کا کھیل نہیں ہوگا۔ الیکشن 2013 میں اس بات کو بہت سے لوگوں نے تحریک انصاف کے خلاف استعمال کیا کے عمران خان اور تحریک انصاف کا پروگرام ناقابل عمل ہے اور کرپشن ختم کرنا یا تعلیم مِں ترقی کرنا مرحلہ وار ہی ممکن ہے۔ اگر موجودہ 5 سال پچھلے 5 سالوں سے بہتر ہونگے تو ہمارے معاشرے کو بہتر بنانے کے بڑے بڑے منصوبے بھی قابل عمل ہونگے اور ہمارے خیالات کو پزیرائی ملے گی۔


ہمیں یہ ہمیشہ یاد رکھنا چاہئے کے سیاست اپنے اقتدار نہیں بلکہ لوگوں کی مجموعی فلاح کے لیے ہی کار ثواب ہے۔

پاکستان تحریک انصاف اور الیکشن ۲۰۱۳

پاکستان تحریک انصاف کروڑوں پاکستانیوں کے دل کی دھڑکن بن کر پاکستانی سیاست کے افق پر سورج کی طرح نمودار ہو چکی ہے۔ پاکستان بھر میں تقریبا ہر حلقہ سے اس کے امیدوار اگر جیتے نہیں بھی تو دوسرے یا تیسرے نمبر پر براجمان ہیں۔ دو تہائی کا جو خواب الیکشن سے پہلے دیکھا گیا تھا وہ تو اگرچہ پورا نہیں ہوا لیکن یہ بات سمجھنے کی ضرورت ہے کے راتوں رات ملنے والی کامیابی زیادہ تر دیرپا نہیں ہوتی۔ عمران خان تو اپنی 20 سالہ سیاسی جدوجہد کے بعد اگرچہ کامیابی کا مستحق تھا لیکن اس کی بنائی ہوئی جماعت اپنے موجودہ رنگ میں بمشکل دو سال کی عمر کو پہنچی ہے۔ ابھی اس جماعت کے کارکنوں کو بہت کچھ سیکھنا ہے۔ میرا آج تک جتنا بھی تحریک کے لوگو ں سے ملنے کا تجربہ ہے اس سے یہی اندازہ لگا سکا ہوں کے نظم و ضبط ابھی ان کارکنوں کے مزاج میں شامل ہی نہیں ہوا ہے۔ چاہے وہ طاہرالقادری کا موقع ہو یا الیکشن کے بعد دھاندلی پر احتجاج کا، تحریک انصاف کے کارکنوں کا اپنے لیڈروں پر دباوّ نہ صرف حیرت انگیز تھا بلکہ اب تو ایسا لگتا ھے کہ وہ اپنے دباوّ سے فیصلہ کروانے میں کامیاب بھی ہو جائیںگے۔

الیکشن میں دھاندلی ہوئی ہے لیکن یہ سب مان رہے ہیں کہ دھاندلی سے زیادہ سے زیادہ 20 سے 30 سیٹوں کا فرق پڑا ہے اور جس کا مطلب ہے کہ تحریک انصاف نے دھاندلی کے بغیر بھِ اپوزیشن میں ہی بیٹھنا تھا، بعض لوگوں کا یہ استدلال کہ تحریک انصاف کے ووٹر کی تعداد اکثریت میں تھی اور اسے دھاندلی سے ہروایا گیا اس لیے سنجیدگی سے نہیں لیا جا سکتا کیونکہ تحریک انصاف کی تیاری جلسوں اور جلوسوں تک تو تھی لیکن پاکستانی الیکشن میں جو اصل کام ہوتا ہے وہ الیکشن والے دن الیکشن بھگتانا ہوتا ہے اور اس بات سے وہ سب لوگ اتفاق کریں گے جو تحریک انصاف کے اندر کی خبریں رکھتے ہیں کے تحریک انصاف الیکشن بھگتانے میں بری طرح ناکام رہی۔ اس میں خاص طور پر الیکشن کی شام کو ووٹ کی گنتی میں ناکامی خاص طور پر قابل زکر ہے جس کی وجہ سے مخالف جماعتوں کے امیدواران کو من مانی کرنے کا مقع مل گیا۔ اگر تحریک انصاف کی اس غفلت کو مخالفین نے استعمال کر کے اپنی جیت رقم کرلی تو اس بات پر پچھتانے اور شور مچانے کی بجائے اسے اپنی کوتاہی سمجھ کر اس سے سبق سیکھنا چاہئے اور آگے کی تیاری کرنی چاہئے۔


پاکستان مسلم لیگ نواز کو ملک دشمن جماعت سمجھنا تحریک انصاف کو آگے بڑھنے نہیں دیگا۔ ہمیں یہ بات سمجھنی ہوگی کے ہماری ترجیحات ہماری سمجھ کے لحاظ سے ہمارے ملک کے بہتر مفاد میں ہیں لیکن یہ ضروری نہیں ہے کے دوسروں کی ترجیحات ضروری طور پر ملک کے لیے تباہ کن ہی ہوں۔ پی ایم ایل این کی تنگ نظر قیادت اس ملک کو تیزی سے تباہیوں کے سفر سے شاید نہیں نکال سکتی لیکن شریف برادران کا اچھا نظر آنے کا خبط انکو ذرداری کا مقام لینے نہیں دیگا۔ طاقتور میڈیا اور باشعور عوام انہیں کرپشن سے کافی حد تک باز رکھیں گے اور جہاں اتنی سہی ہیں یہ ملک تھوڑی بہت کرپشن سہہ ہی سکتا ہے۔